نفسیات کے فلسفہ کا ارتقاء 8

نفسیات کے فلسفہ کا ارتقاء

نفسیات کا فلسفہ ذہن اور انسانی تجربے کو سمجھنے کی کوشش کرتا ہے۔ محققین نے دماغ کے بارے میں جو معلومات دریافت کی ہیں، اس کے ساتھ یہ بات قابل فہم ہے کہ یہ فیلڈ اپنے فریم ورک میں نئی ​​معلومات اور بصیرت کو شامل کرنے کے لیے وقت کے ساتھ ساتھ کیوں مسلسل ترقی کر رہی ہے۔ آئیے فلسفہ نفسیات کے کچھ اہم ادوار پر ایک نظر ڈالتے ہیں جنہوں نے اس کی موجودہ حالت کو تشکیل دیا ہے، اور ساتھ ہی مستقبل میں کیا توقع کی جائے۔

نفسیات کا فلسفہ
قدیم یونان: نفسیات کی ابتدا
قرون وسطی کا یورپ: نفسیات کا تاریک دور
پنرجہرن: نفسیات کا دوبارہ جنم
روشن خیالی: نفسیات میں وجہ کی عمر
انیسویں صدی: نفسیات میں سائنس کا دور
بیسویں صدی: نفسیات کا دور


قدیم یونان: نفسیات کی ابتدا
قدیم یونان میں، فلسفے کی ایک شاخ تھی جس نے انسانی فطرت اور رویے پر توجہ مرکوز کی جسے بیان بازی کہتے ہیں۔ خیال کیا جاتا ہے کہ ارسطو اس کے موجدوں میں سے ایک تھا۔ جیسے جیسے یہ ترقی کرتا گیا، اس نے قائل کرنے اور جوڑ توڑ پر زیادہ سے زیادہ توجہ مرکوز کی۔ یہ نفاست اور بیان بازی سے منسلک ہو گیا — دوسروں کو قائل کرنے کے لیے الفاظ کا فنی استعمال۔ ارسطو کا شاید یہ ارادہ نہیں تھا، لیکن اس کے نظریات نے اس کی بنیاد رکھی جسے آج ہم نفسیات کے نام سے جانتے ہیں۔

قرون وسطی کا یورپ: نفسیات کا تاریک دور
قرون وسطی کے زمانے میں نفسیات مطالعہ کا شعبہ نہیں تھا۔ یہ نشاۃ ثانیہ کے بعد تک نہیں ہوا تھا کہ لوگوں نے ان چیزوں میں دلچسپی لینا شروع کی جو انہیں اور دوسروں کو ٹک کرتی ہے۔ اس وقت کے دوران، نفسیات کو فلسفے کی ایک شاخ سمجھا جاتا تھا جس میں زیادہ تر فلسفیوں کا ماننا تھا کہ انسانی فطرت فطری طور پر اچھی ہے اور اس سے کوئی بھی انحراف بیرونی عوامل جیسے معاشرے یا پرورش کی وجہ سے ہوا ہے۔

پنرجہرن: نفسیات کا دوبارہ جنم
یہ وہ وقت تھا جب نفسیات فلسفے کے ساتھ جڑی ہوئی تھی۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ فلسفی ان طریقوں سے واقف ہونا شروع کر رہے تھے جن سے ان کی سوچ لوگوں کو متاثر کر سکتی ہے اور اس کے برعکس۔ ایسا کرنے کے لیے، انہیں فلسفہ اور نفسیات دونوں کا مطالعہ کرنا پڑا تاکہ وہ بہتر سمجھ حاصل کر سکیں۔ یہ وہ وقت بھی تھا جب ادراک، ادراک، شعور اور ترغیب جیسے موضوعات پر سائنسی تحقیق کی جانے لگی۔

روشن خیالی: نفسیات میں وجہ کی عمر
یہ 18 ویں صدی کے آخر تک نہیں تھا کہ فرانس سے نفسیات کے بارے میں سوچنے کا ایک بالکل نیا طریقہ ابھرا۔ نیا نظریہ، جسے ’نفسیات‘ کہا جاتا ہے، ان خیالات پر مبنی تھا کہ لوگوں کے تجربات لاشعوری خواہشات اور خیالات سے تشکیل پاتے ہیں، اور ان ذہنی عملوں کو خود شناسی کے ذریعے دریافت کیا جا سکتا ہے۔ اس زمانے کا ایک اہم نظریہ دان فلسفی جین جیک روسو تھا، جس نے بچوں کی اخلاقی نشوونما میں مدد کے لیے زیادہ ہمدردانہ نظام تعلیم کی دلیل دی۔

انیسویں صدی: نفسیات میں سائنس کا دور
انیسویں صدی میں نفسیات اپنے ابتدائی دور میں تھی اور اسے سنجیدگی سے نہیں لیا گیا۔ ولہیم ونڈٹ نے لیپزگ میں ایک لیب قائم کی جہاں ان کا خیال تھا کہ سائنس کو انسانی رویے کو سمجھنے کے لیے لاگو کیا جانا چاہیے۔ یہ ولیم جیمز جیسے ماہر نفسیات کے نظریات سے متصادم ہے جن کا ماننا تھا کہ انسان فطری طور پر غیر متوقع ہیں اور سائنسی طریقوں سے صرف ایک چھوٹی سی مقدار کو سمجھا جا سکتا ہے۔ Wundt کی لیب دماغی افعال اور دماغی عمل جیسے میموری اور توجہ کے دورانیے کا مطالعہ کرنے میں دلچسپی رکھنے والے سائنسدانوں اور فلسفیوں کے لیے ملاقات کی جگہ بن گئی۔

اس کی لیب میں، اس نے اور اس کے طالب علموں نے مطالعہ کیا کہ لوگ رنگوں اور آوازوں جیسے محرکات پر کیسے رد عمل ظاہر کرتے ہیں۔ اس طرح، Wundt نے اسے تخلیق کرنے میں مدد کی جسے اب نفسیات میں تجرباتی طریقہ کے طور پر جانا جاتا ہے- یعنی بیرونی متغیرات کو کنٹرول کرکے انسانی رویے کا مطالعہ کرنے کا طریقہ۔ یہ انقلابی تھا کیونکہ اس وقت تک ماہرین نفسیات کنٹرول شدہ تجربات کی بجائے مشاہدات کی بنیاد پر انسانی رویے کے بارے میں اندازہ لگا رہے تھے۔

بیسویں صدی: نفسیات کا دور
ایک نئی صدی کا مطلب نفسیات کے لیے ایک نیا دور تھا۔ 20 ویں صدی کے آغاز نے ایک ایسے وقت کی نشاندہی کی جب بہت سے ممالک نے نفسیات کو مطالعہ اور تحقیق کے ایک اہم شعبے کے طور پر دیکھنا شروع کیا، جس میں نفسیاتی اصولوں کی تفہیم اور اطلاق دونوں میں اہم پیش رفت ہوئی۔ اس دور میں ایک اہم پیش رفت یہ تھی کہ ایک لیب قائم کرنے کے علاوہ، ونڈٹ نے نفسیات میں ایک اور اہم شراکت کی- اس نے اسے دو الگ الگ شعبوں میں تقسیم کیا: فزیالوجی اور سائیکالوجی۔ فزیالوجی، یا حیاتیاتی عوامل کس طرح رویے پر اثر انداز ہوتے ہیں، اور نفسیات، یا رویے کے عوامل انسانوں کو کیسے متاثر کرتے ہیں، دو ایسے موضوعات تھے جن کی پہلے الگ سے تحقیق نہیں کی گئی تھی۔ اس کے طریقے یورپ کے دیگر ماہرین نفسیات میں مقبول ہوئے۔

تحریر: لاریب عباسی خان

ترجمہ: ٹیم اُمیدیں ٹائمز

Read in English

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں